سطح پر دہکتی آگ اور درمیان میں ابلتے شعلے، سورج کی نزدیک ترین تصاویر سامنے آگئیں

لندن: برطانیہ کے ماہرینِ فلکیات نے سورج کی نزدیک ترین شفاف تصاویر جاری کردیں جس میں سورج کی سطح پر دہکتی آگ کو واضح طور پر دیکھا جاسکتا ہے۔

دی مرر کی رپورٹ کے مطابق برطانیہ شمسی توانائی کے ماہرین نے طاقتور ترین کیمرے کی مدد سے لی جانے والی سورج کی ایسی تصاویر جاری کردیں جنہیں آج سے پہلی کبھی انسانی آنکھ نہیں دیکھا۔

ماہرین کی جانب سے جاری ہونے والی تصاویر میں سورج کے درمیانی حصے ‘کیمپ فائر‘ میں شمسی شعلے ابلتے نظر آرہے ہیں جبکہ سورج کی دو سطحوں پر آگ واضح طور پر دہکتی دکھائی دے رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: سائنسی تاریخ میں‌ پہلی بار سورج کی قریب ترین شفاف تصاویر سامنے آگئیں

 برطانوی ماہرین نے تصاویر کا مشاہدہ کرنے کے بعد سورج کے درمیانی حصے میں ابلنے والے شعلوں کو کیمپ فائر کا نام دیا جو  مسلسل سطح کی طرف بڑھتے نظر آرہے ہیں۔

ماہرین کے مطابق اس مشن کے دوران یہ مقصد سمجھ آیا کہ آتش فشاں  اتنی بڑی تعداد میں ہے کہ یہ پورے یورپ میں بلیک آؤٹ کرسکتا ہے۔

ماہرین کے مطابق کرہ ارض پر موبائل فون کے استعمال، ٹرانسپورٹ، جی پی ایس سگنل اور بجلی نیٹ ورک کی وجہ سے خلا کا درجہ حرارت بھی تبدیل ہورہا ہے، جس کی وجہ سے سورج کی سطح‌ پر دہکنے والی آگ بڑھتی جارہی ہے۔

برطانوی وزیر سائنس امندا سولوے کا کہنا تھا کہ ’برطانوی ماہرین نے مدار کی مدد سے 8 سال کی محنت کے بعد بڑی کامیابی حاصل کی، ان تصاویر کی مدد سے نئی پیشرفت سامنے آئے گی کیونکہ سورج کی سطح پر نظر آنے والی آگ معمولی نہیں ہے‘۔



fb-share-icon0

Tweet
20

Comments

comments




Source link

About Raja

Check Also

انسٹاگرام اور میسنجر ایک ہونے کے قریب –

سماجی رابطے کی مقبول ترین ویب سائٹ فیس بک نے اپنے پلیٹ فارمز کو ایک …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *