چین میں کرونا کے بعد نیا خطرہ کھڑا ہوگیا

بیجنگ: منگولیا میں ‘ببونک طاعون’ کے نئے مشتبہ کیسز رپورٹ ہونے کے بعد پڑوسی ملک چین میں بھی طاعون کے پھیلنے کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق منگولیا میں ببونک طاعون کے تین نئے مشتبہ کیسز سامنے آئے ہیں جس نے پڑوس میں واقع چین کو بھی تشویش میں مبتلا کردیا، حکومت نے اقدامات شروع کردیے۔

رپورٹ کے مطابق منگولیا نے 17 صوبوں کو ببونک سے متعلق خطرناک قرار دے دیا ہے، مذکورہ صوبوں میں مہلک بیماری پھیل سکتی ہے۔ رواں ماہ منگولیا میں طاعون کے دو مریض ہلاک بھی ہوچکے ہیں۔

ماہرین کا ماننا ہے کہ اگر یہ وبا کسی جانور میں ہوئی تو بہ آسانی انسانوں میں بھی منتقل ہوسکتی ہے، اور اگر بروقت علاج کرکے بیماری کا جسم میں پھیلاؤ نہ روکا گیا تو 24 گھنٹے کے اندر متاثرہ شخص مر بھی سکتا ہے۔

امریکا میں طاعون کا ایک اور کیس سامنے آگیا

واضح رہے کہ ببونک وائرس سے بچنے کے لیے روس نے بھی حکمت عملی تیار کرلی ہے۔ ببونک طاعون کے کیسز اس سے قبل بھی سامنے آتے رہے ہیں۔ سنہ 2017 میں مڈغاسکر میں طاعون کے 300 کیسز سامنے آئے تھے۔

قبل ازیں امریکی ریاست کلوراڈو میں بھی ایک گلہری طاعون وبا کا شکار ہوچکی ہے۔

fb-share-icon0

Tweet
20

Comments

comments




Source link

About Raja

Check Also

بحران کے بعد سعودی عرب کی اقتصادی حالت میں بہتری –

ریاض: کرونا وائرس نے دنیا بھر کی معیشتوں کو نقصان پہنچایا تاہم کچھ معیشتیں اس …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *