کرونا کا چیونگم سے علاج، سائنسدانوں نے بڑی کامیابی حاصل کرلی

[ad_1]

کرونا وائرس سے متاثرہ افراد بات کرنے، سانس لینے یا کھانسی کے ذریعے اس بیماری کو اردگرد موجود لوگوں میں منتقل کرسکتے ہیں۔

مگر اب طبی ماہرین نے کووڈ کے مریضوں سے وائرس کے آگے پھیلاؤ کی روک تھام کا ایک منفرد طریقہ تیار کرلیا ہے۔

طبی ماہرین نے ایک تجرباتی چیونگم تیار کی ہے جو وائرس کے پھیلاؤ کی روک تھام میں معاون ثابت ہوسکے گی، یہ دعویٰ امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔

پنسلوانیا یونیورسٹی کے ماہرین نے ایسی چیونگم تیار کی ہے جس میں ایک ایسا پروٹین موجود ہے جو کرونا وائرس کے ذرات کو ‘قید’ کرلیتا ہے،اس طرح یہ چیونگم لعاب دہن میں موجود وائرس کی تعداد کو محدود کرسکے گی۔

تحقیق کے مطابق لعاب دہن میں وائرس کی مقدار میں کمی سے متاثرہ افراد کے بات کرنے، سانس لینے یا کھانسی سے وائرس کے آگے پھیلنے کی روک تھام کرنے میں مدد مل سکے گی۔

تحقیق کے مطابق یہ چیونگم ذائقے میں عام چیونگم جیسی ہی ہے اور اسے عام درجہ حرارت میں برسوں تک محفوط رکھا جاسکتا ہے، اور ہاں چبانے سے ایس ٹو پروٹین مالیکیولز کو نقصان نہیں پہنچتا تو اس کو بغیر کسی ڈر کے کھایا جاسکتا ہے، اس تحقیق کے نتائج جریدے مالیکیولر تھراپی میں شائع ہوئے۔

Comments



[ad_2]
Source link

About Raja

Check Also

کووڈ 19 سے دماغ کو سنگین نقصانات کا خدشہ –

[ad_1] کووڈ 19 پھیپھڑوں کو متاثر کرنے والی بیماری ہے تاہم یہ مرض دل، گردوں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *